چمن سیم آ انت مننگے؟ – ٹی بی پی تیدری

الّمی خوانبو

چمن سیم آ انت مننگے؟

ٹی بی پی تیدری

زارین بلوچ

شرئی پاک اوغان سیم آ جنگ ہموتم سلاء بند دروشم ءِ دوئی کرے، ہراتم تدوکا ہفتہ ٹی پاکستانی سیم نا فوجی تا تینا اوغان ہم منصب آتون اِرا وار جھڑپ مس۔ پاکستانی کوالخواہ تا رِد ئٹ جھڑپ ئٹ کم و ود ہشت شاری مرگ ئنا گواچی و کہیک ٹپی مسر۔

پاکستانی کوالخواہ تا دعویٰ ءِ کہ بے دادی یک شمبے نا سہب ہموتم بناء مس ہراتم اوغان سیم نا پارہ غان پاکستانی فورسز آتیا توپ خانہ نا ترند گولہ باری مس۔ پاکستانی لشکر نا حوالکاری کُڑدہ آئی ایس پی آر پارے کہ کم و ود ہفت بندغ مرگ ئنا گواچی اندن 16 بندغ بھاز ٹپی مسنو۔

آئی ایس پی آر نا پین پاننگ ئس کہ پاکستانی لشکر “بیدس سوب و بیدس فرخ جلہو” و “زوراکی” نا ورندی تریسہ جوابی کارروائی کرے۔ آئی ایس پی آر نا پاننگ ئس کہ پاکستانی فورسز آک جوانو ورندی ئس تسر و ایلو پارہ غا شاری تے ٹک کتور۔

قندھار ئٹ اوغان کوالخواہ تا پاننگ ءِ کہ جھڑپ ئٹ اسہ فوجی ئس مرگ ئنا گواچی و 13 ٹپی مسنو۔

پاکستانی نا وزیر دفاع خواجہ آصف پارے کہ اوغان حکومت دا تدینی آ بشخنداری کرینے و داسا دا ویل ایسر مسنے۔

پاکستان نا دفتر خارجہ تدینی نا مذمت کریسہ پارے کہ “دا وڑ نا تدینیک ہڑتوما ملک آتا نیامٹ ایلمی تعلقداری تا رِد ئٹ افس۔”

دفتر خارجہ اسہ بیان اسیٹ پارے کہ “اوغان کوالخواہ تے چاہندار کننگانے کہ دن انگا تدینی تا شرہ آن تینے پدی توننگ مرے و ذمہ وار تا بر خلاف ترند کارروائی کننگے۔” بیان ئٹ پین پاننگانے کہ سیم نا ہڑتوما کنڈ نا کوالخواک حالیت ءِ پین ودنگ آن توننگ کن خڑک حوالکاری ٹی ءُ۔

بلکن حوالکاری بس اف انتئے کہ چار دے آن گڈ پنچ شمبے آ ہڑتوما پارہ غا تا لشکر آک اسہ وار پدا تینتون اڑینگار۔ پوسکنا جھڑپ ئٹ کم و ود اسہ بندغ ئس مرگ ئنا گواچی و 12 پین بھاز ٹپی مسر۔

ٹپی تے زو چمن ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر اسپتال آ سر کننگا ہراڑے ایمرجنسی خلنگا۔

تہہ ئنا معلومداری تیان معلومدار پاکستانی کوالخواک میڈیا ذرائع تے پاریر کہ سم کاری اوغان سیم نا پارہ غان بناء مس۔

واہم اوغان وزارت رکھ بنائی وڑ ئٹ جھڑپ نا دوبہ ءِ پاکستانی لشکر آ خلک، و حالیت نا ترندی ءِ کم کننگ کن ایمنی گپ و تران نا گرج آ زور تس۔

چمن ئٹ اختہ سیم ئنا اِن و بر ءِ دوارہ ملنگ آن مالو یک شمبے آ منہ گھنٹہ کن بند کننگاسس۔

سیم تدوکا تُوہ اسہ ہفتہ سے کن بند کننگاسس ہراتم اوغان تا پارہ غان اسہ سلاء بند بندغ ئس پاکستانی لشکر آ سم کاری کریسس، ہراٹی اسہ بندغ ئس مرگ ئنا گواچی و اِرٹ ٹپی مسوسر۔ داڑان ہڑتوما بدی دار تا نیامٹ ترند سم کاری بناء مس، ہرا ٹی پنچ اوغان کارندہ مرگ ئنا گواچی اندن 14 ٹپی مسر۔

اسہ ہفتہ سے آن گڈ 22 نومبر آ پاکستانی سیم نا کوالخواہ و طالبان کوالخواہ تا نیامٹ اوڑدئی آن گڈ سیم دوارہ ملنگاسس۔ واہم، حالیت داسکان ہم خراب ءِ۔

انت مننگ ءِ ؟

شرئی پاک اوغان سیم کہی دہائی تیان اسلام آباد و کابل نا نیام ئٹ جیڑہ آتا سوب مسنے۔ اسہ تاثر دا ئس کہ، تدوکا سال اگست ئٹی اوغانستان ئٹی طالبان نا کوزہ آن پد، پاکستان جاندمی سیم آ ایمنی دوئی کرینے ولے اُست کٹئی وڑ ئٹ سیم آن ہیپار مروکا بےدادی اوفتا گمان ءِ پرغا۔

اسلام آباد و کابل نا نیام ئٹ چک و تاڑ نا اسہ بھلا سوب سیم آ تار خلنگ آ طالبان نا نمن کننگ ءِ۔ طالبان ڈیورنڈ لائن نا علاقہ آ تار خلنگ نا پاکستان نا حق آ شرہ کرے، ہرادے او ہڑتوما ڈیہہ آتا نیام ئٹ اسہ ناجائز ءُ سیم ئسے نا وڑ قبول کپسہ۔ تدوکا ہفتہ مننگ کروک وڑ ئٹ تومکا نیمہ غاتیان سُم کاری ہمو وخت بناء مس ہرا وخت اوغانک سیمی تار ئنا منَہ بشخ ءِ گُڈنگ نا کوشست کننگ ئسر۔

چمن، ہرا اسہ گٹ ءُ “ٹرانزٹ ٹریڈ روٹ” ئسے، سیم آن ہیپار آن جھڑپ نا بنجا مسنے، ولے ایلو علاقہ آتیٹ ہم جھڑپ آک بناء مسنو۔

سیم ءِ باقاعدہ جوڑنگ کن پاکستانی کوالخواک 2400 کلومیٹر مرغن آ سیم آ کہی جاگہ غا تیا ہڑاند بش کرینو۔ طالبان دن انگا باز آ ہڑاند آتے مر کرینے۔ طالبان نا پاننگ ءِ کہ ہڑاند بش کننگ آن سیم ئنا تومکا کنڈ آتیا تالان پشتون قبیلہ آتا ہن و بر سلیک۔

تجزیہ کار آتا پاننگ ءِ کہ کابل بست و بند پاکستانی طالبان ءِ باہوٹ تننگ ءِ، ہرا سیم بندی ءِ ایسر کننگ ئٹی تد ءُ۔ ٹی ٹی پی اندا زوت ئٹ پاکستان تون جنگ ​​بندی ءِ ایسر کرینے و قبائلی علاقہ آتیٹ پاکستانی لشکر آ سیم آن ہیپار آن جلہو آتے ترند کرینے۔ دا ٹولی تیوہ پاکستان ئٹ جلہو آتا پڑو کرے۔

دا زوت ئٹ مروک جھڑپ آک کابل ئٹ پاکستانی سفیر آ جلہو آن منَہ دے پد مسر۔ دا تدینی ٹی ٹی ٹی پی نا پیدواری ئس، ہرا اسلامک اسٹیٹ نا خراسان باب تون خڑک تعلقداری تخک ہرا جلہو نا ذمہ واری ءِ ارفیسس۔

پاکستانی دفتر خارجہ نا دعویٰ ءِ کہ اودے اوغان طالبان نا کنڈ آن باور تننگانے کہ او ٹی ٹی پی و ایلو عسکریت پسند گل آتے پاکستان نا برخلاف جلہو آتیکن اوغان سرزمین ءِ کاریم ئٹ ہتنگ نا موْکل تروف۔

پاکستان نا اوغان پالیسی نا پوسکن ٹہینگ

6 دسمبر آ اسلام آباد ئٹ مروک اسہ صلہ ئی حوالکاری ئسے ٹی، مسکوہی جرنیل آتا سفارت کار، صحافی و ایلو سیکورٹی چاہندار آک پاکستان و اوغانستان نا نیام ئٹ حالیت آ ہیت کننگ کن اوار مریسہ ٹی ٹی پی نا کنڈ آن ریاست تون جنگ ​​بندی ءِ ایسر کننگ آن پد پین نزور کننگا۔

دا ہیت آ گیشتری امنائی ئس کہ پاکستان نا اوغان پالیسی تا بناء آن جوڑ کننگ و اصلاح نا خواست ءِ۔ پاکستان تدوکا چار دہائی ٹی اوغانستان نا جیڑہ آتیٹ الّمی کڑد ایسری تسنے، ہرانا بناء ءِ 1979 نا سوویت جلہو آن کننگا ہراڑے اسلام آباد امریکہ و سعودی تتون اوار سوویت یونین نا ‘خراب سلطنت’ ءِ بٹِنگ کن مُستی مسر۔

چاہوک آتا پاننگ ءِ کہ اوغان جہاد نا وخت آ، اوغان طالبان کن پاکستان نا مخ تفی ‘اسٹریٹجک کڑمبی’ ٹی مٹ مس، اسہ اندنو پالیسی اس ہرانا کمک ئٹ پاکستانی ریاست، فوج، خاص وڑ ئٹ ، کابل ئٹی اسہ سنگت حکومت اس جوڑنگ نا کوشست کریکہ۔

طالبان، اسہ وار دوارہ، اقتدار ئٹی بس، و اندن لگیک کہ پاکستان نا ’اسٹریٹجک کڑمبی‘ نا پالیسی پورو مس۔ طالبان داسا تینا بخت ئنا خواجہ ئس و اسلام آباد تغ تیٹ کابل نا کنڈ آ ہُراکہ۔

ولے دا زوت ئٹ مروکا جھڑپ آتیان پاش مریک کہ اوغان طالبان پاکستان کن اسہ پین کاٹم خل٘ اس جوڑ مننگ کیک۔ تدوکا منَہ تو آن ہڑتوما ڈیہہ تا خوالخواہ تا نیام ئٹ زبانی چک و تار خننگ مسنے۔ اقوام متحدہ نا جنرل اسمبلی؛ ہرا جہان نا کل آن زہم تخوک تلہ ءِ، اوڑا سلیسا پاکستانی وزیر اعظم شہباز شریف دہشت گردی کن اوغان سرزمین ءِ کاریم اٹ ہتنگ آ جہانی برادری آن رکھ ئنا درشانی کرے، اسہ اندنو تبصرہ اس ہرا کابل حکومت نا کنڈ آ سوختئی ودی کرے۔

مننگ کیک کہ سیم آن ہیپار مروکا چک و تاڑ کم مسنے، و حالیت دا وختا جارات ئٹی ءِ ولے دا ہیت ئنا گمان اف کہ دا زیات وخت اسکان سلو۔ اسہ نہ اسہ وڑ اسیٹ، بے دادی دوارہ پاش مننگ ءِ، و اوغانستان ئٹی ٹی ٹی پی نا ساڑی مننگ دادے یخینی کیک۔

پُوسکنا حوالک

بلوچ راجی مچی نا بشخ مرِسہ جہان ءِ نشان ایتبو کہ نن زندہ و شرفدار ءُ راج ئسے اُن۔ ماہ رنگ بلوچ

بلوچ راج 28 جولائی نا دے گوادر ئٹ سرمریر و جہان ئے کلہو ایتر کہ نن زندہ و خوددار...