یخ تفوئے یار | شاعر: باری آجو

الّمی خوانبو

یخ تَفوئے یار! لشکر برف ئٹی
مہر ئنا بر کین خاخر برف ئٹی

تیز کر رفتارے تینا است نی
مزہ کپک دڑد دمدر برف ئٹی

جوزہ غا تا چوٹی ءَ لگہ قلم
چلتن ءَ چل شئیر پا بر برف ئٹی

کرخسہ نا خنک خیسن خیسن او
سُر ئٹی ئے دا قلندر برف ئٹی

شال ئنا دیدن کہ خڑکا بسونو
دو پَدو جھمر تو جھمر برف ئٹی

جنوری نا دلبری دادے کہ دا
نیمہ پاشے ، نیمہ اندر برف ئٹی

خنتیئا بس تو خڑینک آنبار بس
یات ئنا بھلا سمندر برف ئٹی

ڈاکٹر باری آجو

پُوسکنا حوالک

بلوچ راجی مچی نا بشخ مرِسہ جہان ءِ نشان ایتبو کہ نن زندہ و شرفدار ءُ راج ئسے اُن۔ ماہ رنگ بلوچ

بلوچ راج 28 جولائی نا دے گوادر ئٹ سرمریر و جہان ئے کلہو ایتر کہ نن زندہ و خوددار...